پیٹرک الیگزینڈر وینس اگنو (1822تا 1848 )۔۔محمد ارشد رمضان

تاریخ کے عمل میں شہروں کی قدرو اہمیت، شخصیات کے علاوہ مقامات سے بھی متعین ہوتی ہے،جن کی وجہ سے وہ مرجع الخلائق بن جاتے ہیں۔ بعض مقامات عقیدت کی بنا پر مقدس تصور کیے جاتے ہیں اور زائرین دور دور سے وہاں جمع ہوتے ہیں۔ بعض شہر محلات، مقبروں، اور باغات کے حوالے سے وہاں صاحبان علم و فضل، شاعر، ادیب اور فنونِ لطیفہ کے با کمال لوگ جمع ہو جاتے ہیں۔ بعض تجارتی سرگرمیوں کے سبب شہرت و اہمیت حاصل کر لیتے ہیں۔ ملتان ذی شان بھی ایسے حوالوں سے دنیا کے ان چند شہروں میں ایک ہے جو شہرت عام اور بقائے دوام کے درجے پر فائز ہیں۔
ملتان میں بے شمار ثقافتی اور تاریخی مقامات موجود ہیں۔ کچھ ایسے اہم مقامات ہیں جن کے متعلق اکثریت بے خبر ہے۔ لیکن وہ مقامات تاریخی حوالے سے اہمیت کے حامل ہیں۔ ثقافتی،تاریخی ورثہ سیاحوں کے لیے توجہ کا مرکز ہوتا ہے۔ ایسے اہم مقبرے دیکھنے کے لیے لوگ دور دور سے آتے ہیں اور دیکھ کر تاریخ کے بارے میں علم حاصل کرنے میں مشغول ہو جاتے ہیں۔

ملتان میں موجود ایک ایسے مقبرے کا ذکر کیا جا رہا ہے جس کے متعلق وہاں کے اکثر مقامی لوگ اور ہمارا طلباء و طالبات کا طبقہ نا آشنا ہے پیٹرک الیگزینڈر
ایسٹ انڈیا کمپنی کا ایک برطانوی سرکاری ملازم تھا جس کے دیوان مولراج کے حامیوں نے ملتان کے محاصرے کے دوران قتل کی وجہ سے دوسری سکھ جنگ اور پنجاب کے علاقے پر برطانوی اتحاد کا خاتمہ ہوا۔

tripako tours pakistan

وینس اگنو لیفٹیننٹ کرنل پیٹرک وانس اگنو کا دوسرا فرزند تھا جو کافی شہرت کے حامل مدرا افسر تھا اور اس کے بعد ایسٹ انڈیا کمپنی کا ڈائریکٹر تھا۔
ہیلی بیری کالج میں ایک انتہائی کامیاب کیریئر کے بعد جہاں انہوں نے اپنے سالوں سے پہلے ہی اعلیٰ ہنر اور فیصلے اور کردار کی طاقت کا ثبوت دیا۔ اگنو مارچ 1841ء میں بنگال کی سول سروس میں شامل ہوئے اپنی گوناگوں خدمات بطور اسسٹنٹ کمشنر بنگال، کشمیر اور گلگت کے مشن پر سر انجام دیں اور ان علاقوں میں بہت سی معاشی اصلاحات کیں۔ دہلی ڈویژن کے کمشنر کو دسمبر 1845ء میں وہ سیسلیج ریاستوں کے سپرنٹنڈنٹ میجر جارج براڈ فوٹ کا معاون مقرر ہوا اور 1846ء کے اوائل میں سوبراون کی لڑائی میں موجود تھا۔ اس کے بعد کشمیر کا نیا حکمران اور گلگت کے مشن میں مہاراجہ گلاب سنگھ کے علاقے کی حدود طے کرنے میں ملازم تھا۔

1848ء کے موسم بہار میں اس وقت اس کے رہائشی کا معاون ہونے کے ناطے لاہور کی ڈویژن سے منسلک علاقے ریاست مولتان ( موجودہ ملتان) روانہ کیا گیا اور بطور اسسٹنٹ کمشنر تعینات ہوئے تاکہ وہ اس صوبے کی حکومت مولراج ناظم یا گورنر سے سنبھال لیں جس نے اس سے فارغ ہونے کے لیے درخواست دی تھی۔ یہ ایک سکھ رئیس سردار کاہن سنگھ مان کو دے دیا گیا انہوں نے اپنے آپ کو سیاسی ایجنٹ کی حیثیت سے فنانس اور محصول کا نیا نظام متعارف کرانے کی صلاحیت برقرار رکھی۔ اس مشن پر ان کے ساتھ بمبئی آرمی کے لیفٹیننٹ – ڈبلیو- اے- اینڈرسن بھی تھے جو گلگت میں اپنے مشن میں اس کے معاون رہے تھے اور دیوان نامزد سردار کہن سنگھ مان بھی تھے۔ یہ مشن جب 18 اپریل 1848ء کو مولتان (ملتان) پہنچا تو اگلے دن اگنیو اور اینڈرسن کا دورہ مولراج نے کیا اور کچھ بات چیت بھی ہوئی جس میں ہم آہنگی نہیں تھی اس صوبے کو ان شرائط کے بارے میں ماننا پڑا جن کا مطالبہ ان اکاؤنٹس کے لیے تھا کہ پچھلے سالوں کے چاٹ کو تیار کیا جانا چاہیے۔

20 اپریل کو دونوں انگریز افسروں نے مولتان (ملتان) قلعہ اور مختلف اداروں کا معائنہ کیا مولراج کے رہائشیوں نے مولراج کے ساتھ مل کر اپنے کیمپ میں واپسی پر ان افسران پر حملہ کردیا اور انھیں زخمی کردیا جو فوراً ہی تیز رفتاری سے اپنی رہائش گاہ پر واپس چلا گیا۔ ان دونوں زخمی انگریزوں کو ان کے ساتھیوں نے قلعہ بند مندر یا قلعہ کے ساتھ منسلک عید گاہ میں رکھا تھا جہاں اگلے دن ایک سکھ پہلوان نے قلعہ کے باغی محافظوں کے ساتھ مل کر آپ کو اور کتے کو قتل کر دیا تھا۔

اس واقعے نے اپنے سیاسی نتائج میں اس قدر پورے ہندوستان میں ایک گہری سنسنی پیدا کردی۔ قتل ہونے والے دونوں افسران اگرچہ برسوں میں جوان (اگنیو چھبیس سال ہوتے اگر وہ ایک دن مزید رہتے) عوامی خدمت میں پہلے ہی ایک اعلیٰ شہرت قائم کر چکے تھے۔ اینڈرسن نے کچھ عرصہ قبل ہی سندھ میں سر چارلس نیپئر کے سازگار نوٹس کی طرف راغب کیا تھا اور اس کے آخری ذمہ دار سمیت اگنو نے ملازمت کی تھی۔ اور جیسا کہ اس واقعے نے ثابت کیا مہلک مشن اس اعلیٰ تخمینے کو ظاہر کرنے کے لیے کافی ہے جس میں ان کی خدمات منعقد کی گئیں۔ نہ ہی یہ صرف ابھرتے ہوئے سرکاری ملازم کی حیثیت سے ہی تھا کہ پیٹرک وانس اگنو کی موت پر سوگ پڑا۔ نجی زندگی میں اس کی بہادر معمولی اور بے لوث فطرت نے اسے جاننے والوں میں امر کر دیا اور سب کی عزت پیار جیت لیا تھا۔ سر ہربرٹ ایڈورڈیز نے اپنے ایک قریبی رشتہ دار کو لکھا کہ :

Advertisements
merkit.pk

“موت اور بیماری کی اس سرزمین میں ہمارے بہت سارے شہری آپ کے بھائی کے مقابلے میں زیادہ وقت کا خاتمہ کر چکے ہیں تو شاید ہی کسی کو اتنا اعزاز حاصل ہو کہ وہ اس کا اعزاز پائے گا۔ ”
ملتان کے محاصرے کے بعد وینس اگنو کے لیے ایک یادگار تعمیر کی گئی تھی۔ یہ ملتان کے قلعہ کہنہ میں واقع ایک پارک ابن قاسم باغ میں 30 ° 11′55 ″ N 71 ° 28′29 ″ E پر کھڑا ہے۔
اس مقبرے کے چاروں جانب ہرے بھرے سر سبز درختوں کا جھرمٹ ہے مقبرے کے گرد کھڑے ہو کر ملتان کے جنوبی حصے کا بہت ہی خوب صورت نظارہ کیا جا سکتا ہے۔

  • merkit.pk
  • merkit.pk

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply