زندگی کے گیت۔۔پروفیسر رضوانہ انجم

آج اپنوں کی بہت یاد آرہی ہے۔ گزرا ہوا بہت حسین وقت،پیارے لوگ اور ان کا ساتھ یاد آرہا ہے۔ میں اپنی کزنز میں سب سے چھوٹی تھی،بہت حاضر جواب اور شرارتی تھی۔ہر کام میں ٹانگ اڑانا فرض تھا چاہے وہ خالہ زاد بھائیوں کے ساتھ کرکٹ کھیلنا ہو،درختوں پر چڑھنا ہو یا پھر ڈھولک بجا کر گانے گانا ہو۔ نینو(NEENO میرا نک نیم) سب سے آگے ہوا کرتی تھی۔ گھر کی شادیاں ہوں یا فیملی فرینڈز کی میری اور نیّر باجی کی بڑی ڈیمانڈ ہوا کرتی تھی کیونکہ میں ڈھولک ایکسپرٹ اور وہ وٹہ ایکسپرٹ تھیں۔ہم بیٹھے بیٹھے گانے بنا لیتے تھے اور بھائیوں کی سسرال کی خوب کٹ لگاتے تھے۔بہت معصوم دور تھا۔ بہت کھرے اور سچے گیت تھے جو اس وقت کے کلچر اور اسکی سچائی کے ترجمان تھے۔ نہ ان میں بے حیائی تھی اور نہ سستا پن۔۔۔ان گانوں کے بول مجھے آج بھی یاد ہیں مثلاً ایک گانے کے بول کچھ یوں تھے۔۔

کالے رنگ دا پراندہ

tripako tours pakistan

میرے سجنا نے آندہ

نی میں چم چم رکھدی پھراں

تے پباں پار نچدی پھراں

کالا اے پراندہ نالے چوڑیاں وی کالیاں

امڑی گھٹاواں آج کالیاں امڑی گھٹاواں آج کالیاں

نی میں اڈیاں چکدی پھراں

تے پباں پار نچدی پھراں

پھلاں آتے جویں کوئی بھور بیٹھا جاندا

اینج اودے مکھڑے دا کالا کالا تل وے

نی میں لک چھپ تکدی پھراں

تے پباں پار نچدی پھراں

اسکا مطلب کچھ یوں ہے کہ میرے سجنا نے مجھے کالے رنگ کا پراندہ لا کر دیا ہے اور میں اسے پیار سے چوم کر سنبھال کر رکھتی ہوں اور خوشی سے ناچتی ہوں

میرا پراندہ بھی کالا ہے اور چوڑیاں بھی اور کالی گھٹائیں امنڈ رہی ہیں۔میں خوشی سے پاؤں کی ایڑھیاں اٹھا کر ناچتی پھرتی ہوں۔

میرے سجنا کے چہرے کا کالا تل یوں ہے جیسے پھول پر بھنورا بیٹھا ہو اور میں چھپ چھپ کر اسے دیکھتی ہوں اور خوشی سے ناچتی ہوں۔۔

آج یہ گیت،اسکے بول اور خیال سب outdated ہو گئے ہیں۔اب ساجن سے سجنی کی توقعات اس قدر بڑھ گئی ہیں کہ وہ غریب آسمان سے تارے بھی توڑ لائے تو بھی سجنی خوش نہیں ہوتی اور زندگی اس قدر تیز رفتار ہوگئی ہے کہ شاید سجنی کو ساجن کے چہرے کا تل دیکھنے کی فرصت ہی نہیں اور اگر دِکھ بھی جائے تو یاد نہیں رہتا۔۔یاد بھی رہ جائے تو اس پر اتنا پیار نہیں آتا کہ اسے لک چھپ کر دیکھنے کی خواہش ہو اورنظر آنے پر پاؤں خوشی سے ناچ اٹھیں۔

انسان روبوٹ اور رویے میکانکی عمل بن گئے ہیں۔۔۔اسی لیے مجھے ماضی اچھا لگتا ہے،سچ میں!

ایک اور گیت جو میں اور نئیر باجی بہت گاتے تھے کچھ یوں تھا۔۔۔۔۔

چن وے کہ شوقن میلے دی

چن وے کہ شوقن میلے دی

پیر دھو کے چانجھراں پوندی

میلدی آ وندی۔۔۔۔

کہ شوکن میلے دی

چن وے کہ ہالیاں نے ہل ڈک لئے۔۔۔۔

چن وے کہ ہالیاں نے ہل ڈک لئے

اودی رنگت سانولی دمکے کے بجلی چمکے

چن وے کہ شوقن میلے دی چن وے۔۔۔۔

چن وے کہ کڑتی توں آگ سمدی۔۔

اودے لہو دی چننی دمکے

کہ بجلی چمکے۔۔۔

چن وے کہ شوقن میلے دی چن وے۔۔۔۔

یعنی گیت کیا تھا ایک کم عمر ،الہڑ اور شوقین مزاج لڑکی کے دل کے سارے چھوٹے چھوٹے ارمان تھے ۔۔

وہ کہتی ہے کہ۔۔۔۔

میرے محبوب،

مجھے میلہ دیکھنے کا اسقدر شوق ہے کہ میں جلدی جلدی اپنے پاؤں دھو کر اور ان میں پازیب پہنتی بھاگتی چلی آتی ہوں کہ کہیں دیر نہ ہو جائے۔۔۔۔

اور میرے محبوب،

جب میری سانولی اور دمکتی ہوئی صورت کھیتوں میں ہل چلاتے جوانوں نے دیکھی تو وہ دم بخود رہ گئے ایسے جیسے کہ انکی آنکھوں کے سامنے بجلی چمک رہی ہو۔۔۔۔۔

میرے محبوب،

میرے کُرتے سے آگ پھوٹ رہی ہے

کہ میرا خون چاندنی بن کر دمک رہا ہے

بالکل ایسے جیسے بجلی بادلوں میں چمکتی ہے ۔۔۔

ان لوک گیتوں میں سادگی اور محبت تھی،کوئی دکھاوا اور بناوٹ نہیں تھی،ان میں مٹی اور مٹی میں پلنے والے لوگوں کی شُدھ مہک تھی،جاندار اور تروتازہ۔۔

میں اکثر سوچتی ہوں کہ گیت انسانی احساسات اور جذبوں کے ترجمان ہوتے ہیں۔یہ انسانی فطرت سے اس قدر نزدیک ہوتے ہیں جیسے دل کا دھڑکنا،سانس کا چلنا،پلکوں کا جھپکنا، آنکھوں میں آنسو بھر آنا،تکلیف سے کراہنا،کھلکھلا کر ہنس دینا۔

Advertisements
merkit.pk

یہ ہماری ذات کا اظہار ہوتے ہیں اور یہ اظہار ذات بہت ضروری ہے ۔نہ ہوسکے تو انسان اپنے ذہن اور جسم کے اندر قید ہو کر رہ جاتا ہے اور کبھی کبھی تو گھٹن سے دم توڑ دیتا ہے،جذبوں کو،لفظوں کو بھی ۔۔ پرندوں کی طرح آزاد کر دینا چاہیے تاکہ وہ اڑان بھر سکیں، خوشی خوشی زندہ رہ سکیں ۔

 

  • merkit.pk
  • merkit.pk

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply