• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • گستاؤ کا ھن فرانسیسی شعر و ادب کا علامتی زوال پسند اور تہذیبی نوحہ خواں ۔۔احمد سہیل

گستاؤ کا ھن فرانسیسی شعر و ادب کا علامتی زوال پسند اور تہذیبی نوحہ خواں ۔۔احمد سہیل

گستاو کاھن {Gustave Kahn} فرانسیسی علامتی تحریک کا زوال پسند شاعر ، 21 دسمبر 1859 کو میٹز {Metz}موسلی ، فرانس میں پیدا ہوئے۔ ان کی تعلیم پیرس میں ایکول ڈیس چارٹیس اور ایکول ڈیس  لنگس اورینٹیلس میں ہوئی تھی ، اور انہوں نے پیرس کے جائزوں کو واضح کرنے میں اہم کردار ادا کرنا شروع کیا تھا۔ چار سال شمالی افریقہ میں گزارنے کے بعد وہ 1885 میں پیرس واپس آئے ، انھوں نے یہاں  آکر کئی ادبی جرائد میں کام کیا ،ان ادبی مجلّوں میں ان کی نظمیں بھی شائع ہوتی رہیں  اور ساتھ ہی انھوں  نے نئی علامتی تحریک کے نظرئیے اور اس کے  انتقادی پہلوؤں پر بڑی ذہانت کے ساتھ اس تحریک کی وکالت ہی نہیں کی بلکہ اسےایک عقلی اور منطقی مکالمے کا رخ دے کر ادبی آفاق میں سمو دیا۔ یہ وہی علامتی تحریک تھی جس کے تحت بودلیر، ، میلارمے، رامبو اور ایڈگر ایلن پو کے نام درج کئے جاتے ہیں۔

گستاؤ کاھن وہ پہلے فرد تھے جو  فرانسیسی اور انگریزی شاعری کے عروض و بحر سے انحراف کرکے” الیگزینڈرائن” کے نام سے موسوم کیا جاتا ہے۔ جس کا بانی رونالڈ ڈی الیگزینڈر بتایا جاتا ہے جس نے سترہویں  صدی میں   فرانسیسی ڈرامہ نگاروں  کو  بامِ  عروج تک  پہنچا  دیا تھا۔ فرانسیسی میں یہ بارہ مقطع لفظی{ SYLLABLED} کی نظم ہوتی تھی جسے TETRAMETRIC کہا جاتا تھا۔ انگریزی شاعری میں اسے IA MBIC HEXAMETER کے نام سے پکارا جاتا تھا۔ اردو شاعری میں یہ پابند نظمیں ہوتی ہیں۔ جن کی تقطیع عروضی اصولوں کے مطابق ترتیب دی جاتی ہیں۔ اور مصرعوں کے اوزان مساوی ہوتے ہیں۔ اسے” مسمط” کہا جاتا ہے اور ان میں مصرعوں کی تعداد کے اعتبار سے یہ مثلث، مربع، مخمس ، مسدس، مثمن، متسع اور مثر کہلاتی ہے۔نظم کلام موزوں کو کہتے ہیں۔ یعنی وہ کلام جس میں صرفی یا عروضی وزن ہو۔ ۔ یہاں  مزن سے مراد یہ ہے کہ اس کلام کو کسی بحر میں موزوں کیا جاسکے، نظم کی جہت باہر سے اندر کی طرف ہوتی ہے ۔ نظم بنیادی طور پر تاثر یا جذبہ کے تجزیاتی مطالعے کا ماخذ ہے۔

tripako tours pakistan

گستاؤ  کاھن نے فرانس کی الیگزینڈرائن کی روایات کو پاش پاش کیا اور ” سر” کا انحصار نظم کے تخیل کی حرکیات کو قرار دیا۔ نہ کہ شاعری  اور  شاعری کے اصولوں پر کسی قسم کا اعتراض کیا۔ اردو شعریات میں بھی آزاد نظم انگریزی ادب کے زیر اثر  اوزان، بحر قافیہ وغیرہ کے اصولوں سے انحراف کے طور پر ابھر کر سامنے آئی۔ گستاؤ  کاھن کا موقف ہے کہ شاعر کو نقاد بھی ہونا چاہیے۔ یوں انہوں  نے تاریخ میں اپنی انفرادیت ثبت کی۔

انھوں نے 1886 میں ہفتہ وار جائزہ لا ووگ کی بنیاد رکھی ، جس میں ان کی ابتدائی نظموں میں سے بہت سے شائع ہوئے۔ اسی سال کے موسم خزاں میں ، اس نے جین موریاس اور پال ایڈم کے ساتھ ، ایک مختصر مدت کے لیے تعلق   علامت (Le Symboliste) کے ساتھ قائم کیا ، جس میں انہوں نے شاعر اسٹیفن میلارمے کے غیر منطقی شاعرانہ نظریے کی خوب تشہیر کی۔اور 1888 میں وہ رییو انوپنڈیٹ کی مجلس ادارت میں شامل ہوگئے۔ انہوں نے فرانسیسی اور بیلجئیم کے جائزوں کے لئے اشعار اور تنقید کی جو انتہائی علامت پرستوں کے موافق تھی ، اور کاتول مینڈس{Catulle Mendes} کے ساتھ ، انہوں نے اوڈیون ، تھیٹر انٹون اور تھیٹر سارہ برن ہارٹ میں قائم کیا ، جو نوجوان شاعروں کے ڈراموں کی تیاری کے لئے میٹنیز تھے۔ انہوں نے بمقابلہ آزاد کے سب سے قدیم مصنف ہونے کا دعویٰ کیا ، اور اپنے پریمئر  پولس (1897) کے ایک پیش منظر میں اپنے طریقوں اور تحریک کی تاریخ کی وضاحت کی۔ بعد کی کتابیں لی لیور ڈی امیجز / Catulle Mendes (1897) ہیں۔ لیس فلرز ڈی لا شوق/ Les Fleurs de la passion (1900)؛
Gustave Kahn نے  6 ناولز بھی لکھےاور انہوں  نے 1920 میں Symbolistes et decadants نامی کتاب لکھی جو جدید فرانسیسی شعریات کی تاریخ میں ایک قابل قدر اضافہ ہے۔

گستاؤکاھن کا تعلق یہودی مذہب سے تھا۔ انہوں نے ڈریفس کے معاملے میں ایمیل زولا کے ساتھ فریق بننے کا انتخاب کیا۔ ان کی اہلیہ الزبتھ نے یہودی مذہب کو مذہب دشمنی کے خلاف احتجاج کے طور پر تبدیل کر کے اپنا نام راچیل رکھ دیا۔

کئی برس  گستاؤ  کاھن نے فرانسیسی صہیونی جریدے مینورہ {Menorah}کی تدوین کی اور  ان کی وفات کے بعد ، اس جریدے کے نسخے یروشلم میں یہودی قومی یونیورسٹی کے کتب خانے میں تاریخی ورثے کے طور پر محفوظ کرلیے گئے۔

گستاؤ  کاھن نے آزاد نظم نیا رنگ اور روپ ہی نہیں دیا بلکہ شعری جمالیات کی  کئی جہتوں کو بھی دریافت کیا۔ یہ صنف نظم کلاسیکی اور غیری مرئی روایت سے انحراف کرتی ہے اور قریب قریب اسے مسترد ہی کردیتی ہے۔ مگر گستاؤ  کاھن یہ بھول جاتے ہیں کہ علامت ایجاد نہیں کی جاتی بلکہ ایک تہذیبی اور ثقافتی ورثے سے وجود میں نمو پذیر ہوتی ہے کیونکہ کسی لفظ کے ساتھ ساتھ کچھ قدریں، معمولات ، تحریمات، قرائن اس سے جڑ جاتے ہیں۔ اس زمانے کے فرانسیسی ناقدیں ادب و شعریات کا یہ خیال تھا کہ VERSE LIBRA { آزاد نظم } ہے مگر اس  کے بانی کا نام گمشدہ اور مستور ہے۔ مگر گستاؤ  کاھن نے اپنی کتاب PREMIER POEMS کے دیباچے میں آزاد نظم کا نظریہ سامنے رکھا۔ ان کو ایک جدید اور نئی صنف شعریات کی بنیاد گزار تسلیم کیا جاسکتا ہے۔

گستاؤ  کاھن کا انتقال ۵ ستمبر ۱۹۶۳ کو پیرس میں ہوا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گستاؤ  کاھن کی دو نظمین ملاخطہ کیجیے:
“میں نے ایک ظالم عورت کا خواب دیکھا”
میں ایک ظالمانہ لڑکے کا خواب دیکھتا ہوں
ایک چھوٹا پرندہ اذیت دے رہا تھا ،
اس کے پیلیکس پیلیپائٹ محسوس کرنے کے لیے، میں نے ایک ماں کا چھاتی جیسی دنیا کا خواب دیکھا تھا
سیئسٹا کے سایہ اور آہستہ پروں کے پھڑپھڑ سے آرام ،
اور سفید خوابوں کی گلی میں نے ایک بہن ، پاکیزہ ، پُرسکون خواب دیکھا
مٹھاس کے صرف ہونٹوں کے ساتھ ، { ترجمہ: احمد سہیل}
*****
سمندری ساحل پر تین لڑکیاں
سمندری ساحل پر تین لڑکیاں
کنواری والدہ کو گزرتے دیکھا ہے
قبر نوآبادیات کے ساتھ
آہ! آپ کنواری والدہ کہاں سے آئیں؟
میں کشتی پر بیٹھا تھا
پانی کے طوفان سے گزر رہا ہے
نوآبادیات کی طرف اسٹیئرنگ
جہاں سے آپ کی نظریں سمندر پر پڑتی ہیں
آہ! کنواری ماں تم اکیلی ہو
آپ سفید پوشی سمیٹنے چادر کی طرح ہیں
آپ پانی پر چل چکے ہیں
کالونیڈ آنے کے لئے
میں نے پائلٹ اور کپتان کو ڈبو دیا ہے
میں نے جہاز اور ملاحوں کو غرق کردیا ہے
کیونکہ پانی کے طوفانوں پر
وہ میری رحمت پر یقین نہیں کریں گے
آہ! کنواری ماں ہماری پیاری مسکراہٹیں
ان کی گردنوں میں ہڈی میں کڑا تنگ کردے گی
یہاں تک کہ رحمت کے لئے بہت فریاد کرتا ہے
جسے انہوں نے آسمان پر بھیج دیا ہوتا
ہمارے استعمار تک آپ کے گزرنے سے متاثر
آہ! میری رحم دل لونڈی
یقین کیا ہے جو پانی کے نیچے سوتے ہیں
میں نے پائلٹ اور کپتان کو ڈبو دیا ہے
اور میں تنہا ہی مختصر نوآبادی کا شکار ہوں گا
میرا سفید لباس ایک سمیٹتی چادر کی طرح ہے
آہ! آپ کی مسکراہٹیں تنہا نہیں مرنے دیں گی ۔
مجھے نوآبادیات کے نیچے تنہا چھوڑ دو۔ {ترجمہ: احمد سہیل}

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Advertisements
merkit.pk

پس نوشت: یہ دونوں نظمیں انتہا ئی درجے کی علامتی اور رموزی نوعیت کی ہیں۔ شاید اردو کا روایتی قاری ان نظموں کو دلچسپی سے   پڑھ نہ  سکے ۔ کیونکہ یہ ہمارے  مروجہ شعری مزاج سے بہت دور ہیں ۔ اس کو ترجمہ کرتے ہوئے مترجم کو بڑی عرق ریزی کرنا پڑی۔ یہ وہ دو منتخب نظمیں ہیں جس نے فرانس کی جدید نظموں میں علامت پسندی کی تازہ لہر دوڑائی  بلکہ عالمگیر سطح پر اس کا اثر دینا کے شعری آفاق پر بھی پڑا۔ اردو میں میراجی، ن م راشد، تصدق حسین خالد، احمد ہمیش، مبارک احمد، قمر جمیل ، وحید فاروقی، عبد الرشید،اور ذیشان ساحل وغیرہ { فہرست طویل ہے} نے اس شعری مزاج سے گہرا اثر قبول کیا۔

  • merkit.pk
  • merkit.pk

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply