رات کی رانی۔۔فیصل فارانی

ہجر کے اندھیرے میں
چشمِ تر کے گھیرے میں
یاد کے سبھی جگنو
ٹمٹماتے رہتے ہیں
آنکھ میں کئی لمحے
جگمگاتے رہتے ہیں
رات یوں مہکتی ہے
جیسے رات کی رانی
چاندنی میں اِٹھلائے
شبنمی سی ٹھنڈک کو
خوشبوؤں میں نہلائے
اور تمھاری یادوں سے
میرے من کو مہکائے

Advertisements
merkit.pk

ہجر کے اندھیرے میں
خوشبوؤں کے گھیرے میں
کسمساتا رہتا ہوں
اور رات کی رانی
رات بھر مہکتی ہے!

tripako tours pakistan
  • merkit.pk
  • merkit.pk

فیصل فارانی
تمام عُمر گنوا کر تلاش میں اپنی نشان پایا ہے اندر کہِیں خرابوں میں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply