سیریز-​مرزا غالب کا فارسی کلام(3)۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

​بخت در خواب است می خواہم کہ بیدارش کنم
پارہ ٔ غوغائے محشر کو کہ در کارش کنم
۔۔۔۔۔۔۔۔

سو گیا تھا
میں؟
نہیں، یہ بخت ِ نا ہنجار میرا
اور بخت ِ خُفتہ سے ’ اک خواب ِ خوش‘کا قرض لینا*
یعنی میرا جاگنا اچھے دنوں میں
تب بھی یہ تلبیس تھی ، اک جھوٹ تھا
اور آج بھی ہے ، جانتا ہوں

tripako tours pakistan

میں کہ شاعرہوں، مجھے معلوم ہے یہ قول غالبؔ
’’شاعری جزویست از پیغمبری‘‘۔۔۔۔
ہاں، مگر پیغمبری کی
شرط ہے میں اپنے بخت خفتہ کو بیدار کر لوں
اور یہ قول ِ محال ایسا ہے جس میں
شور ِ محشر کی ضرورت ہے ، کہ میرا بخت ِ خفتہ
ایسے ویسے شور و غل سے
ہاؤ  ہُو سے جاگنے والا نہیں ہے
میری پیدائش سے اب تک
ایک گہری نیند میں سویا ہو ا ہے
نیند کا ماتا یہ مرگ آسا ہے میرا بخت ِ خفتہ
تب ہی جاگے گا کہ جب آسودگان ِ خاک سارے
شور ِ محشر سے اٹھیں گے

Advertisements
merkit.pk

زندگی کا استعارہ ’جاگنا‘ ہے، جانتا ہوں
جانتا یہ بھی ہوں کہ ۔۔۔ سونا اور مرنا ایک سے ہیں
کیا تمسخر ہے کہ میرابخت ِ خفتہ
اُس گھڑی بیدار ہو گا
جس میں میرا انت ہو گا
گویا محشر اور میرے بخت کا بیدار ہونا
ایک ہی لمحے کا قصّہ ہے کہ جس میں
’’پارۂ غوغائے محشر کو کہ در کارش کنم‘‘
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
*غالب کا ایک اردو شعر ہے :
لوں دام ِ خفتہ سے یک خواب ِ خوش، ولے
غالب یہ خوف ہے کہ کہاں سے ادا کروں

  • merkit.pk
  • merkit.pk

ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply