سیریز-​مرزا غالب کا فارسی کلام(2)۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

ایک مکالمہ (مر ز ا غالب کے ساتھ)
دولت بہ غلط نبود از سعی پشیماں شو
کافر نہ توانی شد، ناچار مسلماں شو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ستیہ پال آنند
تُو کیا ہے؟ مسلماں ہے؟ یا کافر ِ زناّری
کچھ بھی ہے، سمجھ خود کو اک معتقد و مومن
مخدوم و مکرّم ہو، ماجد ہو، مقدس ہو
ممتاز و منور ہو، برتر ہو زمانے سے
ہاں، دولت ِ لا فانی ہے رتبہ ٔ شہ بالا
اس فیض رساں سے تو تعزیر نہیں ہوتی
بے لوث بہی خواہ تو بے مہر نہیں ہوتا
اے غالبؔ ِ منعم تُو، خود اپنی مساعی پر۔۔۔
(تھی جس کی ضرورت کیا، تم جیسے موحد کو؟)
۔۔۔خود آپ ہی نادم ہو۔۔۔۔

مرزا غالب –
یہ ایسا تفّقدہے، ایثار یہ ایسا ہے
ہے ایسی بہی خواہی ، ہے ایسی شفاعت یہ
جو خود میں مکمل ہے، تسکین کا باعث ہے
زناّر پہننے کی طاقت ہی نہیں مجھ میں
یہ تاب و تواں غالبؔ، ملتی ہے فقط اس کو
جو اپنی مساعی پر ہوتا نہیں شرمندہ

tripako tours pakistan

ستیہ پال آنند
بہتر ہے رہو شاکر، شرمندہ ٔ احساں ہو
ایثار و تلافی تک اب بھی ہے پہنچ تیری
اصنام پرستی ہے مشتاق ِ ِ بغلگیری
تم سے تو میاں غالب ، اب یہ بھی نہیں ممکن
لیکن ہے ابھی ممکن ، اللہ سے یاد اللہ
قرآت و تلاوت بھی، انفال و وظیفہ بھی
اب ایک یہی رستہ گر باقی بچا ہے، تو
’’ناچار مسلماں شو‘‘
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Advertisements
merkit.pk

آزاد ترجمہ
نیک بختی و کامرانی سے کبھی بھول چوک نہیں ہوتی ۔ (لہذا، اس ضمن میں) تو اپنی مساعی پر خود ہی نادم ہو جا (اور چونکہ) کافر ہونے کی تجھ میں صلاحیت نہیں، نا چار مسلمان ہو جا۔

  • merkit.pk
  • merkit.pk

ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply