• صفحہ اول
  • /
  • ادب نامہ
  • /
  • میری اہلیہ کے ملک عدم سے میرے نام دو مکتوب۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

میری اہلیہ کے ملک عدم سے میرے نام دو مکتوب۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

جسم اور سایہ
آج جب میں
موت کی وادی کے سایوں سے گزر کر
روشنی تک آ گئی ہوں
کیوں یہ لگتا ہے
کہ میرا پنا سایہ۔۔۔
چپکے چپکے میرے پیچھے چلتا چلتا
موت کی وادی کے سب سایوں کو
اپنی گربھ جونی٭ میں سموئے
پھر سے میرے ساتھ آ کر جُڑ گیا ہے
جسم کے اس ٹھوس مادہ اور میرے سائے کا
آپس میں ضم ہونا ۔۔
یہی کیا موت ہے ؟ تم ہی بتاؤ،

کیا بتاؤں میں
کہ وہ تو اپنے اس سفر آخری پر جا چکی ہے
اور مَیں اب اس جہاں میں
صرف اک بے جان خاکہ ہوں ۔۔۔۔
کوئی لا شئے
کوئی گم گشتہ سایہ
ٹھوس مادہ جسم کا میرا کہاں ہے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
٭گربھ جُونی۔ تناسخ کے فلسفہ میں وہ وقفہ جو ایک جنم میں موت کے بعد اور اگلے جنم کے حصول کے درمیان گذرے۔

tripako tours pakistan

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــتت توام آسی
دوسرا مکتوب

میں کہاں تھی؟
میں نہیں تھی ۔۔۔۔ٹھیکرہ سا جسم جو کچھ دیر پہلے
میرا گھر تھا، وارڈ میں بستر پہ رکھا رہ گیا تھا
اور تم سب
دائیںٕ بائیں، آگے پیچھے ، اپنے آنسو پونچھتے تھے
سنسکرت کے ان دعائیہ منتروں کے جاپ میں مصروف تھے
جو آتما کی شانتی کے واسطے لکھے گئے تھے
میں نہیں تھی
وارڈ میں بستر پہ رکھا
ٹھیکرہ سا جسم کل تک میرا گھر تھا

میں تو پیدل یاترا پر تھی کہیں ۔۔۔
پاتال میں، آکاش میں یا ایک خالی شہر میں
جس میں ہزاروں لوگ، سب ہی
اپنی اپنی یاترا پر جا رہے تھے
ایسے لگتا تھا کہ جیسے
چلناـ، ـاُڑناـ ایک ہی حرکت ہو
ہلکی سی، سبک سی،
اور آگے ، اور آگے
اور میں بھی
دوسروں کے ساتھ ہی
اڑتی گئی، چلتی گئی، اُڑتی گئی

روشنی کا ایک منبع دفعتاً آکاش سے پھوٹا
تو اس برقی تجلی سے ہیولے سارے روشن ہو گئے

اور تب یک لخت میں نے
دوسروں میں خود کو دیکھا
اور خود کو دوسروں کے
ان ہیولوں میں نگینے کی طرح پیوست پایا

ہم سبھی اک دوسرے کے ساتھ سُچے موتیوں سے بست تھے
ٹانکے ہوئے تھے
مختلف ہوتے ہوئے بھی سب کے چہرے ایک سے تھے

اور تب ان دوسروں کے ساتھ
جن کے آتمن میں
ایک شیشے کی طرح میں بھی جڑی تھی
رُک گئی، بس ایک لمحہ
اور پھر اس وقت سے انبوہ میں چلتی رہی ، اُڑتی رہی ہوں

تم کہو
میں کون تھی، کیا بن گئی ہوں؟
اور کیا کچھ اور بھی بننا ہے مجھ کو؟

Advertisements
merkit.pk

تت توام آسی ۔۔۔۔۔یہی تو شبد تھے گیتا کے ۔۔۔لیکن
اپنے استغراق کے عالم میں اس مکتوب کو پڑھتا ہوا میں
کہہ نہیں پایا تھا کل شب!

  • merkit.pk
  • merkit.pk

ستیہ پال آنند
ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا