مداوا۔۔ستیہ پال آنند

لڑکی تھی چھ  سات برس کی
دُبلی ، پتلی، اَدھ مریل سی
پھٹا پرانا کُرتا پہنے
اک میلی سی چادر اوڑھے
سوکھے بالوں، پچکے گالوں
بہتی ناک سے سوں سوں کرتی
سڑک کے موڑ پہ
دو کھمبوں کے بیچ میں اک تپّڑ سا بچھائے
اکڑوں بیٹھی ٹھٹھر رہی تھی
کچھ سِکـے ہی شاید اس کو
دن بھر کی گذران کی خاطر مل جاتے ہوں
برفیلا موسم تھا، لیکن چہل پہل تھی۔۔
لوگ بڑے دن کے تیوہار سے کچھ پہلے ہی
نئے لباسوں کی’شاپنگ‘ میں لگے ہوئے تھے۔
مجھ سے جب کچھ بن نہ پڑا تو
میں نے خدا سے گلہ کیا
بہتان تراشے ۔۔۔
بکتا جھکتا چلا گیا میں!

پوچھا، ’’کوئی جواز بھی ہے کیا
بچی کی بد تر حالت کا؟‘‘
پوچھا، ’’ اگر تم سچے، کھرے، امین خدا تھے
تو اس کو یوں چھوڑ نہ دیتے، بھوکا ننگا!‘‘
پوچھا، ’’کوئی مداوا بھی کیا تم نے کِیا تھا؟‘‘

Advertisements
merkit.pk
tripako tours pakistan

شاید کوئی جواب نہیں بن پایاخدا سے
اک خاموشی میں لپٹا لپٹایا
میں گھر واپس پہنچا
رات کو لیکن
خاموشی کی دھُند چھٹی تو
میرے خدا نے
کان میں میرے سرگوشی کی
’’تم نے مجھ سے یہ پوچھا تھا:
کوئی مداوا کیا تھا میں نے
کیا تو تھا لیکن تم اس کو سمجھ نہ پائے۔
یہی وجہ تھی جس کی خاطر
میں نے تمہیں تخلیق کیا تھا!

  • merkit.pk
  • merkit.pk

ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply