سالانہ امتحانات۔۔ محمد ذیشان بٹ

کچھ ماہ کچھ مخصوص سرگرمیوں کے لیے مختص ہوتے ہیں ۔ مارچ کا مہینہ آتے ہی  سکول سے جڑے بچوں کے پہلے سالانہ امتحانات اور ان کے نتائج کا سلسلہ شروع ہوجاتا ہے ۔ اسی سلسلے میں محترم والدین اور اساتذہ کرام سے کچھ گزارشات   ہیں ۔ علم اللہ خالق و مالک کا فضل ہے جتنا ملا ہے اتنا ہی کم ہے ۔ برائے کرم امتحانات کے نتائج کو اتنا بھی سنجیدہ نہ لیں کہ اسے جینے مرنے کا مسئلہ بنا لیں اور پھر اپنی اور اپنے بچوں کی زندگی اجیرن بنا دیں ۔ ایسے بہت سے والدین ہیں خصوصاً والد جو پورا سال بچے کی تعلیم کی طرف توجہ ہی نہیں دیتے سالانہ امتحانات میں ان کو بھی بچے پہلی پوزیشن پر چاہئیں  ۔ ہر والدہ کو اپنا بچہ انعام ملتا نظر آنا چاہیے ۔ بھولے والدین نجی تعلیمی اداروں کے دھوکے سے نکلیں اور   میں  پچھلے پندرہ سال کے تجربے کی بنیاد پر یہ بات یقین سے کہہ سکتا ہوں کہ 90 فیصد والدین کو نتائج کا جائزہ لینا ہی نہیں آتا ہے ۔ پاس فیل کے چکر سے ہم نکل ہی نہیں پاتے ۔ ایک اہم سوال والدین کی خدمت میں پیش کرتا ہوں کہ بہت آسانی سے بغیر سوچے سمجھے  ہم اپنے مستقبل کے معماروں کو نالائق جیسا  سخت لقب دے دیتے ہیں ۔ میں پوچھنا چاہتا ہوں کہ اگر ایک پانچویں جماعت کے بچے نے سائنس میں 90/100 نمبر لیے ہیں اور اب ریاضی میں سے33/100 نمبر لینے سے وہ نالائق کیسے ہو گیا ۔ یا چھٹی جماعت تک پوزیشن لینے والا بچہ آٹھویں جماعت میں فیل ہو کر نالائق کا تمغہ  کیسے حاصل کر لیا ۔ اساتذہ سے ایک سوال کی جسارت کرتا ہوں ۔ آپ لوگ  سکول سے بچے کو نالائق کہہ کر نکال دیتے ہیں آخر وہی بچہ ایک اچھا قاری، حافظ یا پھر ایک بہترین درزی یا مکینک کیسے بن جاتا ہے اگر وہ نالائق ہو تو زندگی کے ہر شعبے میں ہو نا ؟ اس کے علاؤہ جو بچے آج کل 1092/1100 لیتے ہیں ۔ انہوں نے کونسا سائنس دان بن کر ملک کے لیے جھنڈے گاڑ دیے ہیں

گزارشات برائے اساتذہ
آپ نے جو شعبہ ارادی/ غیر ارادی طور پر منتخب کر لیا ہے وہ پیغمبرانہ شعبہ ہے ۔ حضور آل علیہ الصلاۃ والسلام نے اپنا تعارف بھی بطور مدرس کروایا ۔ آپ کا فرمان ہے کہ میں معلم بنا کر بھیجا گیا ہوں ۔ ہمیں یہ چاہیے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی   ہر شعبے میں رہنمائی کرتی ہے ۔ اس لیے ہمیں اپنے اندر وہ اوصاف پیدا کرنے چاہئیں  ۔ جیسے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے عرب کے بدوؤں کو دنیا کی سب سے مہذب قوم بنادیا۔ ہمارے شاگرد بھی ہمارے لئے صدقہ جاریہ ہوں۔۔

tripako tours pakistan

ہر بچے کو اپنا بچہ سمجھیں
بچے کی غلطیوں کو معاف کریں تاکہ اس کو عملی طور پر معاف کرنے کی تربیت مل سکے۔
ہمیشہ وہ مضمون منتخب کیجیے جس میں مہارت ہو مسلسل اپنی عملی اور پیشہ ورانہ قابلیت کو بڑھانے کی کوشش کیجیے۔
یاد رکھیں جو بچہ آج آپ کے پاس ہے وہ لا علم ہے لیکن کل وہ لا علم نہیں رہے گا اور تب آپ کو اس کا سامنا بھی کرنا ہوگا۔
ہمارے استاد کہا کرتے تھے کہ شاگرد وہ نہیں ہوتا جسے استاد کہے کہ یہ میرا شاگرد ہے ، شاگرد وہ ہوتا ہے جو خود اپنا تعارف کروائے کہ میں فلاں استاد کا شاگرد ہوں۔
ایک اور بات بھی تجربے کی روشنی میں موجود اساتذہ کی خدمت میں رکھتا چلوں کہ ایک مرتبہ کوئی شاگرد کسی استاد سے متاثر ہوجائے پھر لاکھ درجہ بہتر قابلیت و استعداد والا استاد بھی اس کی جگہ نہیں لے سکتا۔۔

گزارشات برائے والدین
سالانہ امتحانات کے بعد نتیجے والے دن جانے والے جذبات کو سارا سال جگائے رکھیں۔
اپنے بچے کی  تعلیمی کمی کو جانچنے کی کوشش کریں نجی تعلیمی اداروں کے جھانسوں جیسے میڈل سرٹیفیکیٹ، گفٹ کے چکر میں نہ آئے۔
نمبر، پوزیشن اور گفٹ، سرٹیفیکیٹ سے زیادہ اساتذہ سے یہ جاننے کی کوشش کیجیے، کہ کیا آپ کا بچہ جماعت میں چست  رہتا ہے، کیا اس کے اندر سوال کرنے کی صلاحیت ہے، مختلف سرگرمیوں میں حصہ لیتا ہے۔

بچے کو والدین سے جو سب سے زیادہ بڑا تحفہ چاہیے ہوتا ہے وہ ہے حوصلہ افزائی اس لیے اپنے بچے کی جنس کی  حوصلہ افزائی کیجے خصوصاً دوسروں کے سامنے ، جن مضامین میں اچھی کارکردگی دکھائی ہے ان کا تذکرہ  بار بار کیجیے، اس سے بچے میں اپنی کمی کوسننے کا حوصلہ پیدا ہو گا ۔اور پھر بہتری آئے گی۔

اگر  بچہ آج فرسٹ نہیں آیا تو کوئی بات نہیں اگلے سال آ جائے گا۔
بچے کی وقتی ناکامی کو دوسروں خصوصی رشتہ داروں میں تذکرہ کر کے اسے احساس کمتری کا شکار نہ بنائیں۔

سب سے اہم بات ہے ہر بچے نے ہی ڈاکٹر، انجینئر نہیں بننا ہوتا ان مستقبل کے معماروں میں بہت سے کھلاڑی، صحافی، وکیل ، فن کار، مذہبی رہنما ہوتے ہیں۔

اپنے  بچے کی بات کو سمجھیں ۔ اس کو سنیں اور اس کے مسائل کو حل کرنے کی کوشش کریں۔

Advertisements
merkit.pk

بچے جو ہوتے ہیں وہ برف کے پانی میں چینی  گھولنے کے جیسے ہے ،وقت تو لگے گا ،تھوڑا نہیں مکمل سوچیں!

  • merkit.pk
  • merkit.pk

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست ایک تبصرہ برائے تحریر ”سالانہ امتحانات۔۔ محمد ذیشان بٹ

Leave a Reply