• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • بلوچستان: صوبہ وسائل سے مالامال مگر عوام بدحال۔۔اورنگ زیب نادر

بلوچستان: صوبہ وسائل سے مالامال مگر عوام بدحال۔۔اورنگ زیب نادر

پاکستان کا سب سے بڑا گیس کا ذخیرہ ڈیرہ بگٹی کے علاقے سوئی میں موجود ہے۔ اس کے ذریعے پاکستان کے چپے چپے میں گیس پہنچا دی گئی ہے لیکن جہاں سے یہ گیس نکلتی ہے وہاں اب تک میسر نہیں۔

رقبے کے لحاظ سے پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ صوبہ بلوچستان۔ بلوچستان پاکستان کا وہ واحد صوبہ جس کی سرزمین میں معدنیات کی کمی نہیں ہے, قدرت نے اس سرزمین کو سونا، چاندی، گیس، تیل، پیڑول، ڈیزل، کوئلہ و دیگر معدنیات سے نوازا ہے۔

tripako tours pakistan

لیکن اس کے باوجود یہاں کے عوام غربت و کسمپرسی کی زندگی گزار رہے ہیں اور یہ ملک کا سب سے پسماندہ صوبہ ہے۔

گوادر کو سی پیک کا جھومر کہا جاتا ہے۔ ہر طرف گوادر ہی گوادر,لیکن گوادر کے عوام کس حال میں زندگی گزار رہے ہیں، اس کا اندازہ کوئی   نہیں   لگا سکتا۔ میڈیا میں ہم گوادر کی تعریف  سن سن کر تھک گئے ہیں کہ گوادر دبئی یا سنگاپور بننے جا رہا ہے،‘ یہ روز سننے میں آ رہا ہے، لیکن گوادر کے عوام کو تو   پینے کے لیے صاف پانی تک  میسر نہیں ہے۔

یہ مسئلہ صرف گوادر تک محدود نہیں،  بلکہ  پورے بلوچستان میں ہے اور ہماری مائیں اوربہنیں پانی کے لیے کئی میل سفر طے کرتی ہیں۔ لوڈشیڈنگ 20 ’20گھنٹے ہوتی ہے’ بجلی بالخصوص مکران میں اتنی زیادہ ہے کہ پورےمکران میں 24 گھنٹےبجلی دی جائے تب بھی بجلی کی کمی نہیں ہو گی۔

پاکستان کا سب سے بڑا گیس کا ذخیرہ ڈیرہ بگٹی کے علاقے سوئی میں موجود ہے۔ اس کے ذریعے پاکستان کے چپے چپے میں گیس پہنچا دی گئی ہے لیکن جہاں سے یہ گیس نکلتی ہے وہاں اب تک میسر نہیں۔

بلوچستان میں ایک اور بڑا مسئلہ یہ ہے کہ بلوچستان کے سرکاری ہسپتالوں میں ڈاکٹر اور دوائیاں نہ ہونے کے برابر ہیں۔ اگر کسی کو ایک چھوٹی سی بیماری ہو تو اسے کراچی جانا پڑتا ہے کیونکہ یہاں تو ہسپتال نام  کی چیز ہی نہیں ہے۔ اگر کسی کو کوئی پیچیدہ بیماری ہوتی ہے تو اسے کراچی جانا پڑتا ہے، جس پر ہزاروں روپے  خرچے کے علاوہ تکلیف الگ ہے۔ بلوچستان کے ہسپتالوں میں سالانہ  بجٹ تو کروڑوں روپے بنتا ہے، لیکن معلوم نہیں یہ کہاں خرچ ہوتے ہیں۔

تعلیم قوموں کی ترقی میں اہم کردار اداکرتی ہے۔ جن قوموں نے آج ترقی کی ہے تو اس کا راز تعلیم ہے۔ لیکن بدقسمتی سے بلوچستان میں تعلیم کو کوئی اہمیت نہیں دی جا رہی  ۔ بلوچستان کے بیشتر سکولوں میں کلاس روم اور اساتذہ کی قلت ہے۔ کچھ ایسے سکول بھی  ہیں جہاں طالب علموں کی تعداد 500 سے زیادہ ہے لیکن استاد ایک ہے۔

کچھ ایسے استاد بھی ہیں جو اب ریٹائرڈ ہونے کے قریب ہیں لیکن انہوں نے اب تک ڈیوٹی ہی نہیں دی ہے۔ بلوچستان کے بچوں کو پڑھنے کا بہت شوق ہے لیکن بدقسمتی سے ہمارے ہاں سہولیات نہ ہونے کے باعث تعلیم سے محروم ہیں۔

آج کے دور میں انٹرنیٹ کے ذریعے بہت سے کام ہو رہے ہیں اور طلبہ کے لیے تو  اس کا استعمال ناگزیر ہے۔ بلوچستان کے بیشتر شہروں میں فور جی تو دور کی بات ، تھری جی تک کی سہولت میسر نہیں۔ بلوچستان کے دوسرے بڑےشہر تربت میں تین سال سے زائد عرصے سے فور جی معطل ہے، لیکن آج تک کسی کو نہیں پتہ کہ اسے کیوں معطل کیا گیا ہے۔

جب بلوچستان کے علاقے چاغی کے پہاڑوں میں ایٹمی دھماکے کیے گئے جس کے باعث کئی بیماریوں نے جنم لیا۔ اس ایٹمی دھماکے کے بعد کینسر جیسی خطرناک بیماری نے بھی جنم لیا۔ بلوچستان کے عوام کا مطالبہ ہے کہ بلوچستان میں کینسر ہسپتال  ہونا چاہیے لیکن بیڈ گورنس اور استحصال کے کینسر سے نجات ملے تو حکمران اس طرف توجہ کریں۔

مکالمہ
مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *