کھوسٹ۔ سو الفاظ کی کہانی۔۔سیف الرحمن ادیؔب

بڈھے نے بڑی مشکل سے اپنی پلکیں اٹھائیں۔ گویا ان پر بال نہیں، چاندی کی بھاری بھاری زنجیریں لٹکی ہوئی ہیں، اور گھور گھور کر مجھے دیکھنے لگا۔
میری آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر، نفرت سے ناک سکیڑ کر گویا ہوا:
“جانتے ہو کتنی کراہیت محسوس ہوتی ہے مجھے تم سے؟
تمہاری ذات نفرت کا نشان ہے۔ گھن آتی ہے تم سے۔ مزید برداشت نہیں کر سکتا، اسی لیے آج فیصلہ ہو ہی جائے گا۔”
اپنی کل طاقت جمع کر کے بوسیدہ ہتھیلی اور خشک انگلیوں کے ساتھ بڈھے نے پتھر اٹھایا اور میری طرف اچھال دیا۔
آئینہ چکنا چور ہو گیا۔۔

سیف الرحمن ادیؔب
سیف الرحمن ادیؔب
سیف الرحمن ادیؔب کراچی کےرہائشی ہیں۔روزنامہ”اسلام“میں انکی سوالفاظ کی کہانیاں شائع ہوتی رہتی ہیں۔فیسبک پر ان کاایک پیج ہےجس پر 200 سےزائد سو الفاظ کی کہانیاں لکھ چکے ہیں۔اس کے علاوہ ان کی سو الفاظ کی کہانیوں کا ایک مجموعہ "اُس کے نام" بھی پی ڈی ایف کی صورت میں شائع ہو چکا ہے۔