کچھ نہ کرنے کی اہمیت۔۔عدیل ایزد

SHOPPING

آج  کی  تاریخ  میں  اگر  آپ  دن  کے کم  از  کم  بارہ  گھنٹے  مصروف  نہیں  ہیں  تو   ایک  طرح  سے  آپ  بے روزگار  ہیں۔  لوگ  آپکو  کاہل  ہی  سمجھیں گے  کیونکہ  آج  کا  دور   کاروباری  دور  ہے ۔ ہر کوئی  دنیا  کو تبدیل کرنے  کی  جدوجہد  میں  ہے۔  اور  یہ  کاروباری  دور  آہستہ  آہستہ  کاروباری   کلچر  میں   تبدیل  ہو  رہا  ہے،  اور  اس  کاروباری  کلچر  میں   فارغ  رہنا  آسان  نہیں۔

آج  کے  دور  میں  مصروف  رہنا  تو  سویگ /  ٹرینڈ  سا  ہو گیا  ہے ،  بھائی  دو  رات  سے  سوئے  نہیں  ہیں،   یار  یہاں  مصروف  تھے  وہاں  مصروف  تھے ۔۔۔ جن  کے  پاس  کچھ  نہیں  بھی  ہو  کرنے  کو   وہ  بھی  مصروف  ہیں۔   ۔ویہلے  مصروف۔

مجھے  غلط  مت  سمجھیے  گا،  لیکن   چند  ہی  حقیقی  کاروباری  شخصیات  ہیں  ہمارے  درمیان  جو   کچھ  نیا  کرنا  چاہ  رہے  ہیں۔  جو  سوسائٹی  کے  کچھ   سنجیدہ  مسائل  کو  حل کرنے کی  کوشش  کر  رہے  ہیں  ہاں   اور  یہ  بھی  صحیح  ہے کہ  اسکے  لیے  آپکو   دن  رات  محنت   بھی  کرنا  پڑے  گی ۔  مگر  کسی  طرح    لوگوں   کا   عام خیال  یہ  بن  چکا  ہے  کہ   اپنا  سیلف ورتھ /  قدر  کو  ثابت  کرنے  کے  لیے   آپکو  چوبیس  گھنٹے  مصروف  رہنا  پڑے  گا۔

آج  اگر  دو  منٹ  خالی  کیا  بیٹھ  جاؤ   تو   ایسا  لگتا  ہے  جیسے  کوئی  گناہ  سرزد  ہو گیا  ہو۔ جیسے  کچھ  غلط  کر  رہے  ہوں۔  تو  اس  مضمون  میں  ہم  اسی  چیز  کے  بارے میں  بات  کریں  گے  کہ  کیوں  کچھ  نہیں  کرنا  بھی  ضروری  ہے۔  اور  اس  چیز  کو  آسانی  سے  سمجھنے کے  لیے  میں  آپکو  ایک  چھوٹی  سی  کہانی  سناتا  ہوں ،  دو مگر مچھوں  کی  کہانی ۔  ایک  تالاب  تھا  جس  میں  دو  مگر مچھ  رہتے  تھے ۔  ان  میں  سے  ایک  نوجوان  اور  ناتجربہ کار  تھا  جبکہ  دوسرا   بزرگ  اور  تجربہ کار۔  ایک  دن  چھوٹا  مگر مچھ،  بڑے  مگر مچھ  کے   پاس  جاتا  ہے  اور  بولتا  ہے  کہ  میں  نے  سنا  ہے  کہ  آپ  اس  تالاب  کے  سب  سے  خطرناک   شکاری  ہیں  کیا  آپ  مجھے  کچھ  طریقے  سکھا  سکتے  ہیں   جن  کو  استعمال  کرتے  ہوئے  میں  بھی  ایک  اچھا  شکاری  بن  سکوں۔  یہ  سن  کر  بڑا  مگر مچھ ،  جو   کڑی   دوپہر  کی  گرمی  میں   تالاب  کے کنارے سو رہا  ہوتا  ہے،  اپنی  ایک  آنکھ  کھول  کر   چھوٹے  مگر مچھ   کی   طرف  اک  نظر  دیکھتا  ہے  اور   پھر  سو  جاتا  ہے ۔  یہ  چھوٹے  مگر مچھ  کو  اچھا  نہیں  لگتا   اسے  بہت  برا  محسوس  ہوتا  ہے  اور وہ  دل  ہی  دل  میں  سوچتا  ہے   کہ  اب  میں  خود  ہی  اسے  شکار  کر کے  دکھاتا  ہوں ۔  وہ  تالاب  کی  دوسری  طرف  چلا  جاتا  ہے   اور  کچھ  دیر  بعد  جب  بڑے  مگر مچھ  کے  پاس   لوٹتا  ہے،  جو  اب  بھی  نیند  کے  مزے  لوٹ  رہا  ہوتا  ہے،  تو   بولتا  ہے  میں  نے  آج  دو  مچھلیوں  کا شکار  کیا ۔  تم  نے  کیا  پکڑا ؟   کچھ  بھی  نہیں۔  شاید  تمہیں  تو  شکار  کرنا  ہی  نہیں  آتا   لیکن  اس  کی  باتوں  کا  بڑے  مگر مچھ  پر  کوئی  اثر  نہیں  پڑتا۔  اور  وہ  اسے نظر  انداز  کرتے  ہوئے  سویا  رہتا  ہے۔  بڑے  مگر مچھ  کے  اس   رویے   سے  نوجوان اور ناتجربہ کار مگرمچھ  ما یوس  ہو  جاتا  ہے   اور  غصے   میں  واپس  چلا  جاتا ہے ۔  چند  گھنٹے  بعد   جب  وہ  واپس  آتا  ہے   تو  اس  کے  منہ  میں  ایک  بڑا  سا  بگلا  ہوتا  ہے ۔   تا کہ  وہ  بڑے  مگرمچھ  کو دکھا  سکے  کہ  وہ  بھی  بڑا  شکار  کر  سکتا ہے   لیکن  جب  وہ  آتا  ہے  تو  کیا  دیکھتا  ہے  کہ   جہاں  بڑا  مگرمچھ  سو  رہا  تھا   اس  کے  بالکل  قریب  ایک  بڑا  سا  ہرن  پانی  پی  رہا  تھا  اور  پلک  جھپکتے  ہی  بڑا مگرمچھ بجلی  کی  سی  رفتار  سے  پانی  سے  باہر  نکلتا  ہے ،  ہرن  کی  گردن  کو  دبوچتا  ہے   اور  اسے  پانی  کے  اندر  کھینچ  لیتا  ہے ۔  بڑا  مگرمچھ  مزہ  لے  کر  اسے کھانے  لگتا  ہے   جبکہ  چھوٹا  مگرمچھ  ہکابکا اسے  دیکھتا  رہتا  ہے۔  وہ  اپنے  منہ میں  بگلا  دبائے   اس کے  قریب  آتا  ہے  اور حیرت   زدہ   لہجے   میں  پوچھتا  ہے   یہ  شکار  تم  نے  کیسے  کیا؟   یہ  سنتے  ہی  بڑا  مگرمچھ  مسکراتے ہوئے   بولتا  ہے کہ   “میں  نے  تو  کچھ  بھی  نہیں  کیا”۔

SHOPPING

ہماری  کہانی  کافی حد  تک  اس  چھوٹے  مگرمچھ  کے  جیسی  ہے ۔  ہمیں  بھی  لگتا  ہے  کہ  چوبیس  گھنٹے  ہاتھ   پیر  مارنے  سے  ہی  زندگی  میں  کچھ  حاصل  کیا  جا سکتا ہے ۔  مگر حقیقت  یہ  ہے  کہ   چوبیس  گھنٹے  مصروف   رہ  کر  آپ  کچھ  کرو  نہ  کرو  دباؤ  کا شکار  ضرور  ہو جاؤ  گے۔  اور  آج  کی  تاریخ  میں  ہم  سب   دباؤ  کا شکار  ہی  تو  ہیں۔   بڑا  شکار  کرنے  کے  لیے  ہمیں   پُرسکون   رہنے  کی  ضرورت  ہے ۔ ہمیں  خود آگاہی  کی  ضرورت  ہے ،  ہم  کون  ہیں؟   ہمیں  کیا  اچھا  لگتا  ہے؟  ہم  کس  مہارت   کو  اپنا  سکتے  ہیں؟۔  اور  ان  سوالات  کے   جواب   ہمیں  پرسکون  رہ  کر  ملتے  ہیں  نہ  کہ  شور  مچانے  سے۔  ہمیں  دو  چیزیں  سمجھنے  کی  اشد ضرورت  ہے   ایک  ہے  ایکشن  جبکہ  دوسرا  ہے  ریفلیکشن۔  ہمیں  ایکشن  سے  زیادہ  ریفلیکشن  کی  ضرورت  ہے۔  کیونکہ  جدید خیالات ریفلیکشن  سے آتے  ہیں  نہ  کہ   ایکشن  سے۔   اس  میں  کوئی  شک  نہیں  کہ  ایکشن  بھی  ضروری  ہے  لیکن  بعض  اوقات ،  کوئی  ایکشن  نہ  لینا   زیادہ  اہم  ہوتا  ہے۔  آپ  سڑک  پر  یونہی  چلیں  گے  تو   آپ  کے  دماغ  میں  زیادہ  دلچسپ  خیالات  آئیں  گے بر عکس  اس  کے  کہ  آپکو  زبردستی   سوچنے  کو  بٹھا  دیا  جائے۔  ہمارا   معاشرہ   کچھ   نہ کچھ کرتے   رہنے   کا   عادی   ہے۔ ہم   لوگ  کسی   کی  قدر   کا  اندازہ   اس   کے  کام  کی  ٹائمنگ  یا  مدت  سے  کرنے  لگے  ہیں  اور ہمیں  اس  سوچ  کو  بدلنے  کی ضرورت  ہے۔ ہمیں  کچھ  نہ  کرنے  کی  بھی  ضرورت  ہے۔۔

SHOPPING

عدیل ایزد
عدیل ایزد
قاری اور عام سا لکھاری...شاگردِ نفسیات

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *