اَن کہی(نظم)۔۔رؤف الحسن

ایک کھڑکی ادھ کھلی سی
اور سرد ہوا چلی سی
اک خط ادھ لکھا سا
اور سگریٹ ادھ جلی سی
چاند مدھم مدھم سا
جیسے پھول کی کلی سی
دل تھا ڈوبتا سا
اور آنکھ میں نمی سی
کسی غم آشنا سے
اک چاہت اجنبی سی
تیری آنکھ کے اشارے
کوئی بات ان کہی سی

Rauf Ul Hassan
Rauf Ul Hassan
I do not consider myself a writer. Instead, I am a player. As one of my friend s said: "You play with words. " He was right. I play, and play it beautifully.

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست ایک تبصرہ برائے تحریر ”اَن کہی(نظم)۔۔رؤف الحسن

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *