اب کہیں جو رفتگاں کا غم منانا دوستو۔۔ صدیق انجم

SHOPPING

اب کہیں جو رفتگاں کا غم منانا دوستو

ذکر میرا بھی وہاں خاطر میں لانا دوستو

سب تلاطم نَخوتِ گردوں کی دیمک کھاگئی

اب کہاں شوخی ، کہاں لہجہ پرانا دوستو

شامِ غم ہےجوش میں اورصبح کاامکاں نہیں

زندگی جیسے کوئی ہو قید خانہ دوستو

یوں سمجھ   لینا اسیری سے رہائی پا گیا

میرے مرنے کی خبر پر مسکرانا دوستو

ہم سکوں زادوں کے چہرے گرد مائل کر گیا

تھا رَمیدہ موج میں اَسپِ زمانہ دوستو

ایسی وسعت،ہم مزاجی باغ میں حاصل کہاں

کیوں نہ صحرا میں بنا لیں آشیانہ دوستو

جس کے سارے نقش لوحِ یاد سے دھندلا گئے

SHOPPING

چھوڑ دو اُس کے فسانے کیا سنانا دوستو

SHOPPING

صدیق انجم
صدیق انجم
شاعر، نثر نگار اور حقیقی ادب کا داعی

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *