آخری ملاقات۔۔مزمل مختار

آخری ملاقات
آخری ملاقات کے بعد
میں نے
سماج سے کشید کردہ خواہشات کی الکوحل کے دور کا
آخری جام پیا ‘ اور
محبت کے تاکستانوں سے
زندگی کی منڈی میں منتقل ہوگیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آخری ملاقات پر
میں نے
آخری بار اس سے کہا
میرا راستہ چھوڑ دو
اس نے وحشت زدہ قدم بڑھائے
کپکپاتے ہاتھوں سے مجھے تھام لیا اور
مرے ساتھ لگ کے بہت روئی
آج ایک مدت کے بعد
میں شِدّت سے رویا ہوں
وہ احساس کی دیوی کے روپ میں
جلوہ گر ہوکر
ہم کلام ہوئی تو
میری شرم آلود نِگاہوں نے
اپنے ضمیر کے وجود پر کاری ضرب لگائی
مجھے روح کی گہرائیوں تک
زخموں کا کرب محسوس ہوا
جانکاری ہوئی کہ
میں دنیاوی منافقت کے تجارتی عمل کا حصہ
بن چکا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسے اپنے سامنے پاکر
مجھے اپنی پلکوں پر
صدیوں کا بوجھ محسوس ہوا
وہ بہت دکھی تھی‘ اور
اس کا بدن چھلنی
اس کے پاک وجود پر
صدیوں کی تاریک استحصالی تاریخ نے
جبر کے پانچ ہزار پانچ سو پانچ نشان
ثبت کیے تھے!

مہمان تحریر
مہمان تحریر
وہ تحاریر جو ہمیں نا بھیجی جائیں مگر اچھی ہوں، مہمان تحریر کے طور پہ لگائی جاتی ہیں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *