اسرائیل  اور  فلسطینی  شیعہ ۔۔حمزہ ابراہیم

فلسطین  پر  برطانوی  قبضے  کے  دوران  1931ء  میں  ہونے  والی  مردم  شماری  کے  مطابق  فلسطین  کے  علاقے  الجلیل  میں  سات  قصبے  شیعہ  مسلمانوں  پر  مشتمل  تھے:  تربیخا،  صلحہ،  المالکیہ،  النبی  یوشع،  قدس،  ھونین  اور  آبل  القمح؛  جن  میں  شیعوں  کی  آبادی  چار  ہزار  ایک  سو  افراد  تک  تھی۔  یہ  ایک  چھوٹی  سی  اقلیت  تھی۔  اس  وقت  فلسطینیوں  کی  آبادی  آٹھ  لاکھ  کے  قریب  تھی،  اور  یہ  تعداد  کل  آبادی  کا  صفر  اعشاریہ  پانچ  فیصد  بنتی  ہے  [1]  ۔

1948ء  میں  اسرائیل  کا  قیام  فلسطینی  آبادی  کیلئے  ایک  مکمل  طور  پر  نا  قابل  یقین  حد  تک  دہشت  ناک  تباہی  لایا  تھا۔  صلحہ  میں  یہودی  لشکر  نے  ”  آپریشن  ہیرام“  کے  عنوان  سے  قتلِ  عام  کیا  جس  میں  اسرائیل  کے  سرکاری  ریکارڈ  کے  مطابق  ساٹھ  سے  نوے  افراد  کو  قتل  کیا  گیا  [1]۔  ایک  عینی  شاہد  نمر  عون  کے  مطابق:”جب  یہودی  لشکر  ہمارے  گاؤں  میں  آیا  تو  اعلان  کیا  کہ  اگر  ہمارے  پاس  کوئی  ہتھیار  ہیں  تو  ان  کے  حوالے  کر  کے  سرنڈر  کر  دیں۔  گاؤں  کے  لوگوں  نے  ایسا  ہی  کیا۔  یہودی  لشکر  اپنے  ساتھ  تیرہ  گاڑیاں  لایا  تھا  جنہوں  نے  گاؤں  کو  گھیر  لیا  تھا۔  جب  گاؤں  والے  ایک  جگہ  جمع  ہو  گئے  تو  یہودیوں  نے  فائر  کھول  دیا۔  متعدد  لوگ  قتل  ہوئے  ۔  میں  زخمی  ہوا  مگر  لاشوں  کے  نیچے  چھپ  کر  جان  بچائی۔  رات  پڑی  تومیں  زخمی  حالت  میں  ایک  گدھے  پر  سوار  ہو  کر  لبنان  چلا  آیا“[2]  ۔  المالکیہ  پر  صیہونی  ایئر  فورس  نے  بمباری  کی[3]۔  ھونین  میں  بیس  افراد  کو  قتل  اور  چار  لڑکیوں  سے  جنسی  زیادتی  کی  گئی[4]۔  اس  قتلِ  عام  کا  مقصد  شیعہ  آبادی  کو  دہشت  زدہ  کر  کے  اپنی  زمین  سے  بے  دخلی  پر  مجبور  کرنا  تھا۔  نتیجتاً  شیعہ  قصبوں  سے  آبادی  لبنان  کی  سرحد  سے  پار  کر  کے  وہاں  کے  شیعہ  اکثریتی  علاقے  میں  چلے  گئی۔البتہ  اس  دوران  کچھ  بچے  ہجرت  نہ  کر  سکے  اور  خود  کو  زمانے  کے  بے  رحم  دھارے  کے  حوالے  کرنے  کے  سوا  ان  کے  پاس  کوئی  راستہ  نہ  بچا۔  آج  بھی  انکی  اولاد  اسرائیل  میں  رہتی  ہے  لیکن  وہ  اپنی  آبائی  ثقافت  اور  مذہب  سے  اپنا  رشتہ  برقرار  نہ  رکھ  سکے  اور  اب  وہ  اپنے  آباء  و  اجداد  کی  طرح  روزِ  عاشوراء  پر  جلوس  یا  نیاز  کا  اہتمام  نہیں  کرتے[1]۔

بیسویں  صدی  اور  فاشزم

سائنس  جب  نئی  ٹیکنالوجی  کو  جنم  دیتی  ہے  تو  زمانہ  بدل  جاتا  ہے۔  صنعتی  انقلاب  کے  نتیجے  میں  انیسویں  صدی  میں  سامنے  آنے  والے  قومی  ریاست  کے  تصور  نے  ہر  شخص  کو  سیاسی  طاقت  میں  حصہ  دار  بنا  دیا،  گویا  ہر  فرد  ایک  چھوٹا  موٹابادشاہ  بن  گیا۔  ایسے  میں  آبادی  کا  اکثریتی  طبقہ  حاکم  بن  گیا  اور  اقلیتوں  کے  مساوی  انسانی  حقوق  خطرے  میں  پڑ  گئے[5]۔  جمہوریت  اکثریت  کیلئے  بادشاہت  یا  کسی  مذہبی  حکومت  سے  بہتر  نظام  حکومت  ہے۔  جمہوریت  کی  کئی  شکلیں  ہو  سکتی  ہیں  اور  انسانی  حقوق  کے  احترام  پر  کاربند  جمہوریت  اقلیتی  آبادیوں  کے  استحصال  اور  ان  پر  اکثریت  کے  تشدد  کا  سد  باب  کر  سکتی  ہے۔  لیکن  اس  کی  ایک  شکل  فاشزم  بھی  ہے  جو  اقلیتوں  کیلئے  ظلم  کی  سیاہ  رات  ثابت  ہوتا  ہے۔  برصغیر  میں  جب  یہ  نیا  دور  شروع  ہوا  تو  یہاں  شدھی  تحریک،  راشٹریہ  سیوک  سنگ  اور  تحریک  خلافت  نے  نسلی  اور  مذہبی  افکار  کو  سیاسی  مقاصد  کیلئے  استعمال  کرنا  شروع  کیا۔  اس  دیسی  فاشزم  کا  مکروہ  چہرہ  1947ء  میں  بے  نقاب  ہوا  جب  ہندوستان  میں  مسلمانوں  اور  پاکستان  میں  ہندوؤں  اور  سکھوں  کو  قتل،  جنسی  زیادتی  اور  لوٹ  کا  سامنا  کرنا  پڑا۔  اسکی  ذمہ  داری  کانگریس  اور  مسلم  لیگ  کی  سیکولر  قیادت  پر  نہیں  بلکہ  فاشسٹ  افکار  والے  ہندو،  سکھ  اور  مسلمان  مولویوں  پر  آتی  ہے  جو  نئی  حکومتوں  کے  مستحکم  ہونے  کے  عمل  کے  دوران  مذہبی  مراکز  سے  اپنے  علاقوں  میں  موجود  اقلیتوں  کے  خلاف  مذہبی  جنگ  کے  اعلانات  کرتے  رہے[6]۔  قائد  اعظم  نے  گیارہ  اگست  1947ء  کو  قانون  ساز  اسمبلی  سے  خطاب  کرتے  ہوئے  کہا  تھا  کہ:  ”آپ  پاکستان  میں  اپنے  مندروں،  مسجدوں  اور  عبادت  کی  دوسری  تمام  جگہوں  میں  جانے  میں  آزاد  ہیں۔آپ  کا  مذہب  اور  فرقہ  کیا  ہے،  اس  سے  کاروبار  ریاست  کا  کچھ  لینا  دینا  نہیں  ہے۔وقت  گزرنے  کے  ساتھ  سیاسی  معنوں  میں  ہندو  ہندو  نہیں  رہیں  گے،مسلمان  مسلمان  نہیں  رہیں  گے۔  مذہبی  معنوں  میں  نہیں  ،کیونکہ  وہ  تو  ہر  شخص  کا  ذاتی  معاملہ  ہے“۔  لیکن  وہ  لوگ  جو  قائدکو  اچھا  مسلمان  نہیں  سمجھتے  تھے  غیر  مسلم  پاکستانیوں  کے  جان  و  مال  و  ناموس  پر  ٹوٹ  پڑے۔  بارڈر  کے  اُس  طرف  مسلمانوں  کے  تحفظ  کیلئے  جانے  کی  جرات  کرنے  کے  بجائے  بارڈر  کے  اِس  طرف  غیر  مسلم  اقلیت  کو  جہاد  کا  ہدف  قرار  دیا  گیا۔  آج  بھی  پاکستان  میں  اقلیت  دشمن  افکار  کی  حامل  تنظیمیں  تحریک  خلافت  کی  انہی  فاشسٹ  باقیات  کا  تسلسل  ہیں[7]۔

صیہونی  فاشزم  اور  فلسطین  کا  انخلاء

یورپ  میں  یہودیوں  کے  ساتھ  امتیازی  سلوک  صدیوں  سے  جاری  تھا۔  صنعتی  انقلاب  کے  بعد  جدید  قومی  ریاستیں  متشکل  ہوئیں  تو  یہ  امتیازی  سلوک  منظم  تر  ہو  گیا۔  انیسویں  صدی  میں  مغربی  ممالک  نے  ایشیاء  اور  افریقہ  کے  ممالک  کو  کولونیاں  بنایا  تو  یورپ  کے  کچھ  یہودیوں  نے  صیہونی  تحریک  کی  بنیاد  رکھی۔  اس  تحریک  نے  یہودیت  کو  ایک  مذہب  کے  بجائے  ایک  قوم  کے  طور  پر  پیش  کرنا  شروع  کیا  اور  فلسطین  کی  طرف  ہجرت  کر  کے  اسے  کالونی  بنانے  کی  دعوت  دینا  شروع  کی۔  صیہونی  تحریک  شروع  سے  ہی  فلسطینی  آبادی  کا  نسلی  صفایاکرنے  کا  رجحان  رکھتی  تھی،  چنانچہ  1917ء  میں  ایک  صیہونی  فکری  رہنما  نے  لکھا:

”ہمارا  خیال  ہے  کہ  فلسطین  کو  کالونی  بنانے  کا  عمل  دو  جہتی  ہونا  چاہئیے:  اسرائیل  میں  یہودیوں  کی  آباد  کاری  اور  وہاں  سے  عرب  آبادی  کو  ملک  سے  باہر  منتقل  کرنا“  [8]۔

برطانیہ  نے  1923ءمیں  فلسطین  پر  قبضہ  جمایا  تھا۔  1928ء  میں  برطانیہ  نے  فلسطین  میں  مقامی  آبادی  کو  اقتدار  میں  شریک  کرنا  چاہا  تو  مجوزہ  لیجس  لیٹو  کونسل  میں  فلسطینی  نمائندگان  کی  تعداد  کو  یہودی  نمائندگان  کے  برابر  رکھا  گیا۔  صیہونی  تحریک  کی  طرف  سے  یورپ  میں  ہجرت  کی  تشویق  دینے  کے  باوجود  یورپ  سے  یہودی  عوام  اپنا  گھر  بار  چھوڑنے  کو  تیار  نہ  ہوئےتھے  اور  فلسطین  میں  یہودیوں  کی  آبادی  دس  فیصدتک  تھی۔  برطانیہ  کی  طرف  سے  فلسطینی  نمائندگان  کی  تعداد  کو  آبادی  کے  تناسب  سے  کہیں  کم  قرار  دینے  کے  خلاف  فلسطین  میں  احتجاج  شروع  ہو  گیا۔  انگریز  یہودی  اقلیت  کے  حقوق  کے  تحفظ  کیلئے  اس  سے  بہتر  تجویز  لانے  میں  ناکام  رہے،  اور  اس  ناکامی  میں  برطانیہ  میں  موجود  صیہونی  لابی  نے  اہم  کردار  ادا  کیا۔  صیہونی  تحریک  پورے  فلسطین  پر  قبضہ  چاہتی  تھی  اور  اقتدار  میں  فلسطینیوں  کاحصہ  کم  سے  کم  رکھنا  چاہتی  تھی۔  فلسطینیوں  کا  احتجاج  1936ء  میں  ایک  مسلح  تحریک  آزادی  میں  بدل  گیا  جس  کو  انگریزوں  نے  باہر  سے  فوج  لا  کر  تین  سال  کے  ظلم  و  ستم  کے  بعد  کچل  دیا۔  اسی  دوران  برطانوی  فوج  کے  ایک  افسر  نے  صیہونی  عسکری  تنظیم”  ہگاناہ“  کو  فوجی  تربیت  دی  تا  کہ  ان  کو  فلسطینی  تحریک  آزادی  کے  خلاف  استعمال  کیا  جا  سکے[9]۔  فلسطین  میں  انگریزوں  کی  فوج  کی  تعداد  ایک  لاکھ  سے  تجاوز  کر  گئی  تھی  اور  جنگ  عظیم  دوم  میں  فلسطینی  مزاحمت  مفلوج  ہو  کر  ختم  ہو  گئی  [10]۔  اقتدار  میں  حصہ  نہ  ملنے  اور  ہگاناہ  کے  مقابلے  کیلئے  کوئی  فوج  نہ  ہونے  سے  اکثریت  کا  قومی  وجود  مٹ  گیا۔

جنگ  عظیم  دوم  کے  دوران  یورپ  میں  رہنے  والے  یہودیوں  کو  نازی  فاشزم  کے  ہاتھوں  بدترین  مظالم  کا  سامنا  کرنا  پڑا  تھا  ۔  ان  میں  سے  ساٹھ  لاکھ  کو  قتل  کیا  گیا  اور  بچ  جانے  والوں  کی  اکثریت  امریکا  اور  فلسطین  ہجرت  کر  گئی۔  البتہ  اس  ہجرت  کے  بعد  بھی  فلسطین  کی  مقامی  آبادی  میں  یہودی  ایک  تہائی  اقلیت  تھے،  کیوں  کہ  اکثر  مہاجرین  نے  امریکا  جانے  کو  ترجیح  دی  تھی۔فلسطین  میں  صیہونی  تحریک  کثیر  سرمایہ  خرچ  کر  کے  محض  چھ  فیصد  زمین  خرید  پائی  تھی  جس  پرکوئی  ریاست  قائم  نہیں  کی  جا  سکتی  تھی۔  فاشزم  نظریات  کبھی  اقلیت  میں  رہ  کر  رو  بہ  عمل  بھی  نہیں  لائے  جا  سکتے۔  چنانچہ  صیہونیوں  نے  اپنی  فاشسٹ  ریاست  قائم  کرنے  کیلئے  فلسطینیوں  کے  مکمل  خاتمے  یا  ان  کو  ایک  معمولی  اقلیت  بنانے  کے  منصوبوں  کو  عملی  شکل  دینے  کا  فیصلہ  کیا  اور  اس  مقصد  کے  حصول  کیلئے  یورپ  کی  فاشسٹ  پارٹیوں  کے  ہتھکنڈوں  کو  اپنایا۔

انگریز  ہندوستان  سے  نکل  چکے  تھے  اور  اب  وہ  فلسطین  سے  جا  رہے  تھے۔  برطانیہ  نے  فلسطین  کے  سوال  کا  حل  نکالنے  کی  ذمہ  داری  اقوام  متحدہ  کو  دے  دی  اور  نومبر  1947ء  کو  جنرل  اسمبلی  نے  فلسطین  کی  دو  ریاستوں  میں  تقسیم  کی  قرارداد  منظور  کر  لی۔  فلسطینیوں  نے  اس  تقسیم  کو  مسترد  کیا  اور  حقیقت  پسندانہ  مذاکرات  کے  ذریعے  اس  مسئلے  کے  حل  پر  زور  دیا،  مگر  صیہونیوں  نے  اس  کو  قبول  کرنے  کا  اعلان  کیا۔  البتہ  اس  تقسیم  کے  مطابق  بھی  نئی  یہودی  ریاست  کے  زیر  قبضہ  آنے  والے  علاقوں  میں  آدھی  آبادی  فلسطینیوں  کی  تھی  ۔  10  مارچ  1948ء  کو  تل  ابیب  میں  ہگاناہ  کے  دفتر  میں  یہودی  فوجی  افسران  اور  صیہونی  پارٹی  کے  سینئر  ارکان  کی  میٹنگ  ہوئی  جس  میں  ”پلان  ڈی“  کے  عنوان  سے  فلسطینی  آبادی  کی  فوری  اور  تیز  بے  دخلی  کا  منصوبہ  تیار  کیا  گیا۔  اس  کے  مطابق  بڑے  پیمانے  پر  خوف  پھیلانے؛  آبادیوں  کو  گھیرے  میں  لے  کر  بمباری  کرنے؛  گھروں،  سامان  اور  املاک  کو  آگ  لگانے؛  عمارتوں  کو  مسمار  کرنے؛  آبادی  کو  نکال  باہر  کرنے  اور  آخر  میں  تباہ  شدہ  املاک  کو  بارودی  سرنگیں  بچھا  کر  مکمل  طور  پر  ختم  کرنے  کے  لیے  مفصل  اور  واضح  ہدایات  دی  گئی  تھیں۔  یہ  فلسطینی  شہری  اور  دیہی  آبادیوں  کی  مکمل  تباہی  کا  منصوبہ  تھا۔  جنگ  عظیم  دوم  میں  یورپ  کے  یہودیوں  کی  طرح  1948ء  میں  فلسطینی  بھی  آنے  والی  تباہی  کے  آثار  دیکھتے  ہوئے  بھی  اس  کو  پوری  طرح  سمجھ  نہ  سکے  تھے  اور  نہ  ہی  اس  کا  مقابلہ  کرنے  کی  تیاری  کے  قابل  تھے۔  صیہونیت  فلسطینیوں  کے  ساتھ  وہی  کچھ  کررہی  تھی  جو  اس  سے  بڑے  پیمانے  پر  فسطائیت  نے  یورپ  میں  یہودیوں  کے  ساتھ  کیا  تھا:  مار  دو  یا  مٹا  دو!۔  اس  مار  دھاڑ  کے  بیچ  برطانیہ  کا  فلسطین  پر  مینڈیٹ  ختم  ہو  گیا  اور  14مئی  1948ء  کو  بن  گوریان  نے  اسرائیل  کے  قیام  کا  اعلان  کر  دیا  ،  جس  کے  بعد  پہلی  عرب  اسرائیل  جنگ  ہوئی  جس  میں  اردن  نے  شمولیت  نہ  کی  اور  ہگاناہ  سے  دس  گنا  کم  نفری  پر  مشتمل  غیر  تربیت  یافتہ  عرب  لشکر  شکست  کھا  گیا[11]۔  یہ  منصوبہ  نو  ماہ  میں  مکمل  ہوا  ۔  تقریباً  آٹھ  لاکھ  انسانوں  کو  مار  بھگا  یا  گیا  اور  پانچ  سو  اکتیس  قصبوں  کو  برباد  اور  گیارہ  شہری  علاقوں  کو  فلسطینی  آبادی  سے  خالی  کر  دیا  گیا۔  اسی  فیصد  فلسطینی  علاقے  پر  قبضہ  کر  لیا  گیا۔

لبنان  پر  اسرائیلی  حملے  اور  فلسطینی  شیعیت  کا  احیاء

اسرائیل  کی  طرف  سے  1948ء  میں  کئے  گئے  نسلی  صفائے  سے  بچ  جانے  والی  سنی  مسلمان  آبادی،  جس  کی  تعداد  ساڑھے  گیارہ  لاکھ  کے  قریب  ہے،  میں  سے  چند  ایک  نے  2006ء  کی  دوسری  حزب  الله  اسرائیل  جنگ  کے  بعد  شیعہ  مسلک  قبول  کیا  ہے۔  اس  طرح  اس  سرزمین  پر  شیعہ  مسلک  کا  ناتوان  درخت  پھر  سے  ہرا  ہو  گیا  ہے۔  الناصرہ  صوبے  کے  قصبے  دبوریہ  میں  ایک  امام  بارگاہ  قائم  کی  جا  چکی  ہے  جہاں  محرم  کے  پہلے  دس  دنوں  میں  عزاداری  کا  اہتمام  کیا  جاتا  ہے۔  البتہ  شیعہ  اقلیت  کو  قصبے  کے  باقی  رہائشیوں  کی  طرف  سے  کبھی  کبھی  منافرت  کا  سامنا  کرنا  پڑتا  ہے  اور  حکومتی  ایجنسیاں  بھی  ان  کوزیرِ  نظر  رکھتی  ہیں۔اس  دباؤ  کی  وجہ  سے  شیعہ  آبادی  کا  درست  تخمینہ  لگانا  ممکن  نہیں  کیوں  کہ  کئی  شیعہ  تقیہ  کرتے  ہیں[1]۔

غزہ کے جبالیہ پناہ گزین کیمپ میں مقیم عبدالرحیم حماد نامی ایک فلسطینی نے بھی 2006ء کی حزب اللہ اسرائیل جنگ کے بعد  شیعت قبول کی تھی۔ 2014ء میں اسلامک جہاد نامی تنظیم کے رکن شیخ ہشام سلیم نے شیعیت قبول کی اور “الصابرین” کے نام سے ایک شیعہ تنظیم کی بنیاد رکھی۔ 2016ء میں ان کے گھر پر دستی بم سے حملہ کیا گیا۔

یہاں اس بات کا ذکر بھی ضروری ہے کہ ایران او رمشرق وسطی کے دیگر ممالک میں کچھ شیعہ نوجوان سنی مسلک کی طرف بھی راغب ہوئے ہیں اور مسلمان معاشروں میں مسلک بدلنے کا   عمل ایک معمول کی بات ہے۔

حوالہ  جات:

  1. Khalid Sindawi,  “Are  There  any  Shi’ite  Muslims  in  Israel?”,  Journal  of  Holy  Land  and  Palestine  Studies,    7  (2),  pp.  183–199,  (2008).
  2. Robert Fisk,  “The  Great  War  for  Civilisation:  The  Conquest  of  the  Middle  East”,  Harper  Perennial  (2006).
  3. Ilan Pappe,  “The  Ethnic  Cleansing  of  Palestine”,    181,  Oneworld  Publications  Limited,  Oxford,  (2006).
  4. Morris,  “The  Birth  of  the  Palestinian  Refugee  Problem  Revisited”,  pp.  249,  447;  Cambridge  University  Press,  (2004).
  5. Michael Mann,  “The  Dark  Side  of  Democracy”,  Cambridge  University  Press,  (2005).
  6. (i) Ishtiaq  Ahmed,  “The  Punjab  Bloodied,  Partitioned  and  Cleansed”,  Oxford  University  Press,  (2014).

(ii)  Nandita  Bhavnani,  “The  Making  of  Exile:  Sindhi  Hindus  and  the  Partition  of  India”,  Tranquebar  Press,  (2014).

  1. Mushirul Hasan,  “Traditional  Rites  and  Contested  Meanings:  Sectarian  Strife  in  Colonial  Lucknow”,  Economic  and  Political  Weekly,    31(9)  pp.  543–550,  (1996).
  2. Ilan Pappe,  “The  Ethnic  Cleansing  of  Palestine”,    7,  Oneworld  Publications  Limited,  Oxford,  (2006).
  3. Ilan Pappe,  “The  Ethnic  Cleansing  of  Palestine”,    14–16,  Oneworld  Publications  Limited,  Oxford,  (2006).
  4. Ilan Pappe,  “The  Ethnic  Cleansing  of  Palestine”,    25,  Oneworld  Publications  Limited,  Oxford,  (2006).
  5. Ilan Pappe,  “The  Ethnic  Cleansing  of  Palestine”,    xii–xiii,  Oneworld  Publications  Limited,  Oxford,  (2006).

حمزہ ابراہیم
حمزہ ابراہیم
باقی مضامین پڑھنے کیلئے حمزہ ابراہیم کے نام پر کلک کریں-

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *